تازہ ترین :

شروع اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے ِ

الم ﴿۱﴾یہ کتاب (قرآن مجید) اس میں کچھ شک نہیں (کہ کلامِ خدا ہے۔ خدا سے) ڈرنے والوں کی رہنما ہے ﴿۲﴾ جو غیب پر ایمان لاتے اور آداب کے ساتھ نماز پڑھتے اور جو کچھ ہم نے ان کو عطا فرمایا ہے اس میں سے خرچ کرتے ہیں 

ad

دنیا بھر کے ممالک 63 ہزار ارب ڈالر کے مقروض

  1 ‬‮نومبر‬‮ 2017   |    11:57     |     کارو بار

اسلام آباد (ویب ڈیسک) عالمی مالیاتی فنڈ کی رپورٹ میں انکشاف ہوا ہے کہ دنیا بھر کے ممالک کُل 63 ہزار ارب ڈالر کے قرض میں، امریکا 20 ہزار ارب ڈالر کے ساتھ پہلے نمبر پر ہے، جبکہ جاپان تقریبا 18ً فیصد یا 11340 ارب ڈالرز کے ساتھ دوسرے نمبر پر ہے اور اس کا قرض جی ڈی پی شرح کے230 فیصد کے

لگ بھگ ہے لیکن اس قرض کا صرف 10 فیصد حصہ بیرونی ہے۔ابھرتی ہوئی معاشی سپر پاور چین قرض کے اعتبار سے 7 اعشاریہ 9 فیصد یا تقریباً 5 ہزار ارب ڈالرز کے ساتھ تیسرے نمبر پر ہے۔ لبنا ن کے قرض کی شرح 149 فیصد ہے،قرض لینے میں فرانس اور جرمنی بھی کسی سے پیچھے نہیں ہیں۔ان کا حصہ 3 اعشاریہ 8 فیصد یا2394 ارب ڈالر ز ہے، بھارت بھی اس فہرست میں 2 اعشاریہ 5 فیصد یا تقریباً 1600 ارب ڈالرز کے ساتھ نمایاں ہے۔اس عالمی قرض منڈی میں پاکستان کا حصہ ناروے، فن لینڈ ، ڈنمارک کی سطح پر یعنی صرف اعشاریہ 3 فیصد یا 202 ارب ڈالر ہے لیکن لگ بھگ 300 ارب ڈالر ز ،معمولی جی ڈی پی کے لحاظ سے یہ قرض جی ڈی پی کے پیمانے پر67 فیصد بنتا ہے۔معیشت دانوں کا خیال ہے کہ قرض کا جی ڈی پی کی 60 فیصد شرح سے بڑھنا ٹھیک نہیں ہوتا۔عالمی مالیاتی فنڈ نے یونان کو باور کرایا ہے کہ اگر قرض لینے کی روش نہ بدلی تو قرض جی ڈی پی کی شرح مستقبل میں 275 فیصد کی خطرناک ترین سطح پر بھی پہنچ سکتی ہے۔

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 
اپنی رائے کا اظہار کریں -

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

تازہ ترین خبریں

تازہ ترین تصاویر


>