تازہ ترین :

شروع اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے ِ

الم ﴿۱﴾یہ کتاب (قرآن مجید) اس میں کچھ شک نہیں (کہ کلامِ خدا ہے۔ خدا سے) ڈرنے والوں کی رہنما ہے ﴿۲﴾ جو غیب پر ایمان لاتے اور آداب کے ساتھ نماز پڑھتے اور جو کچھ ہم نے ان کو عطا فرمایا ہے اس میں سے خرچ کرتے ہیں 

وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا ہے

وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا ہے

  3 دسمبر‬‮ 2017   |    09:32     |     پاکستان

اسلام آباد (ڈیلی آزادنیو زڈیسک) وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا ہے کہ سیاسی جدوجہد کرنے والے لوگوں کو سینے سے لگا کر رکھنا چاہیے،جاوید ہاشمی کی سیاسی اہمیت سے کوئی انکارنہیں کرسکتا،جاوید ہاشمی کی کتا ب میں سیاست میں فوج کے کردار پر تزکرہ ہے ، فوجی آمریت اورفوج کے پیشہ ورانہ کردارمیں زمین آسمان کافرق ہے،فوج کا کردار ملک کی

سلامتی کے لیے ہونا چاہیے سیاست میں نہیں،16 وزرائے اعظم کوالزامات لگاکرنکالا گیا،کیوں پرویزمشرف کا احتساب نہیں ہوا؟کیا کبھی کسی دوسرے ادارے کے سربراہ کونکالاگیا؟کیوں افتخارچودھری کے بیٹے کا احتساب نہیں ہوا؟اتوار کے روز اسلام آباد میں سینئر سیاستدان جاوید ہاشمی کی کتا ب کی تقریب رونمائی میں خطاب کرتے ہوئے وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ جاوید ہاشمی کا مسلم لیگ سے جدا ہونا ہمارے لیے اذیت کا لمحہ تھا،جاوید ہاشمی سے میرا تعلق کبھی نہیں ٹوٹ سکتا،سیاسی جدوجہد کرنے والے لوگوں کو سینے سے لگا کر رکھنا چاہیے،جاوید ہاشمی کی سیاسی اہمیت سے کوئی انکارنہیں کرسکتا،جاوید ہاشمی کے جانے کی ذمے دار مسلم لیگ تھی،جاوید ہاشمی کے مسلم لیگ ن چھوڑنے سے دلی اذیت ہوئی ، جاوید ہاشمی جیسے سیاستدان سر کا تاج ہوتا ہے ، جاوید ہاشمی کی سیاسی خدمات کو کوئی کم نہیں کر سکتا۔ انہوں نے کہا کہ جاوید ہاشمی کی کتا ب میں سیاست میں فوج کے کردار پر تزکرہ ہے ، فوجی آمریت اورفوج کے پیشہ ورانہ کردارمیں زمین آسمان کافرق ہے،ہم جدوجہد کے مرحلے سے گزر رہے ہیں،آئین کی سربلندی پرکوئی سمجھوتا نہیں کریں گے،نظریہ ضرورت دفن نہیں ہوا اس کودفن کرنا ہوگا،نظریہ ضرورت کو پاکستانی قوم کبھی قبول نہیں کرے گی،فوج کا کردار ملک کی سلامتی کے لیے ہونا چاہیے سیاست میں نہیں،۔خواجہ سعد رفیق نے کہا کہ کوئی مصنوعی سیاسی جماعت زیادہ دیرتک نہیں چل سکتی،پی ایس پی کا کچھ نہیں بننے والا جومرضی کرلیں،بہترہوتا ایم کیوایم کے لوگوں کوخود فیصلہ کرنے دیا جاتا، بہتر ہوتا کہ سیاسی جماعتوں کو فیصلے خود کرنے دیے جائیں ، سیاسی جماعت کولیڈ کون کرے گا اس کا فیصلہ سیاسی ورکر کرے گا ، سیاست آزادی سے کرنے دی جائے۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں آج بھی جمہوریت مکمل طور پر نہیں ہے،16 وزرائے اعظم کوالزامات لگاکرنکالا گیا،کیوں پرویزمشرف کا احتساب نہیں ہوا؟کیا کبھی کسی دوسرے ادارے کے سربراہ کونکالاگیا؟کیوں افتخارچودھری کے بیٹے کا احتساب نہیں ہوا؟انہوں نے کہا کہ چند لوگ پاکستان کی قسمت کا فیصلہ نہیں کریں گے،کب تک ایسا نظام چلے گا؟پاکستان اداروں کی باہمی لڑائی کا متحمل نہیں ہوسکتا،ہم اپنی جماعتوں میں جمہوری رویوں کوپروان نہیں چڑھاسکے،جماعتوں کوچلنے دیا جائے انہیں توڑا نہ جائے،محترمہ کی شہادت کے بعد مصنوعی لیڈرشپ بنانیکی کوشش کی گئی،ہم گلی کے ووٹر کو حق حاکمیت کیوں نہیں دیتے؟

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 
اپنی رائے کا اظہار کریں -

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

پاکستان خبریں

تازہ ترین خبریں

تازہ ترین تصاویر


>