تازہ ترین :

شروع اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے ِ

الم ﴿۱﴾یہ کتاب (قرآن مجید) اس میں کچھ شک نہیں (کہ کلامِ خدا ہے۔ خدا سے) ڈرنے والوں کی رہنما ہے ﴿۲﴾ جو غیب پر ایمان لاتے اور آداب کے ساتھ نماز پڑھتے اور جو کچھ ہم نے ان کو عطا فرمایا ہے اس میں سے خرچ کرتے ہیں 

ad

ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﺗﮭﺎ ﺟﺲ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺿﻤﺎﺩ ﺍﺯﺩﯼ ﺗﮭﺎ

  7 جنوری‬‮ 2017   |    07:48     |     ڈیلی آزاد سپیشل

ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﺗﮭﺎ ﺟﺲ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺿﻤﺎﺩ ﺍﺯﺩﯼ ﺗﮭﺎ، ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺟﻨﺘﺮ ﻣﻨﺘﺮ ﺳﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﺟﻦ ﺑﮭﻮﺕ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﮯ ﺳﺎﺋﮯ ﺍﺗﺎﺭﮦ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻧﺒﯽ ﮐﺮﯾﻢ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﺩﻋﻮﺕ ﮐﮯ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯽ ﺍﯾﺎﻡ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﺿﻤﺎﺩ ﺍﺯﺩﯼ ﻣﮑﮧ ﺁﯾﺎ۔ ﯾﮧ ﯾﻤﻦ ﮐﺎ ﺑﺎﺷﻨﺪﮦ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺭﮮ ﻋﺮﺏ ﻣﯿﮟ ﺟﻨﺘﺮ ﻣﻨﺘﺮ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﻋﻼﺝ ﮐﮯ ﻟﯿﺌﮯ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﻭﮦ ﻣﮑﮧ ﻣﻌﻈﻤﮧ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﯾﮧ ﮐﮩﺘﮯ ﺳﻨﺎ ﮐﮧ ﻣﺤﻤﺪ ﮐﻮ ﺟﻦ ﮐﺎ ﺳﺎﯾﮧ ﮨﮯ ﯾﺎ ﺟﻨﻮﻥ ﮨﮯ ( ﻣﻌﺎﺫ ﺍﻟﻠﮧ) ، ﺿﻤﺎﺩ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﺴﮯ ﺑﯿﻤﺎﺭﻭﮞ ﮐﺎ ﻋﻼﺝ ﺍﭘﻨﮯ ﺟﻨﺘﺮ ﻣﻨﺘﺮ ﺳﮯ ﮐﺮ ﻟﯿﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﮐﮭﺎﺅ ﻣﺤﻤﺪ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﮩﺎﮞ ﮨﯿﮟ؟ ﻗﺮﯾﺶ ﺍﺳﮯ ﺣﻀﻮﺭ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻟﮯ ﮔﺌﮯ۔ ﯾﮧ ﻧﺒﯽ ﮐﺮﯾﻢ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﺣﺎﺿﺮ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ : ﻣﺤﻤﺪ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﺁﺅ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﻋﻼﺝ ﮐﺮﻭﮞ۔ ﻣﮕﺮ ﺣﻀﻮﺭ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻓﻀﻮﻝ ﺑﺎﺕ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﯾﮧ ﺧﻄﺒﮧ ﭘﮍﮬﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ :" ﺳﺐ ﺗﻌﺮﯾﻒ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﻭﺍﺳﻄﮯ ﮨﯿﮟ، ﮨﻢ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﻌﻤﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﺷﮑﺮ ﺍﺩﺍ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮨﺮ ﮐﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﻋﺎﻧﺖ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﺍﻟﻠﮧ ﺟﺴﮯ ﺭﺍﮦ ﺩﮐﮭﻼ ﺩﮮ ﺍﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﮔﻤﺮﺍﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﺷﮩﺎﺩﺕ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺳﻮﺍ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻌﺒﻮﺩ ﺑﺮﺣﻖ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﻭﮦ ﯾﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﺮﯾﮏ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺷﮩﺎﺩﺕ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﻣﺤﻤﺪ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﺁﺧﺮﯼ ﺭﺳﻮﻝ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮨﮯ"۔ ﺿﻤﺎﺩ ﻧﮯ ﺑﺲ ﺍﺗﻨﮯ ﮨﯽ ﺍﺭﺷﺎﺩﺍﺕ ﺳﻨﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺟﮭﻮﻡ ﺍﭨﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﻮﻻ : ﯾﮩﯽ ﮐﻠﻤﺎﺕ ﭘﮭﺮ ﺳﻨﺎ ﺩﯾﺠﺌﮯ۔ ﺩﻭ ﺗﯿﻦ ﺩﻓﻌﮧ ﺍﺱ ﻧﮯ ﯾﮩﯽ ﮐﻠﻤﺎﺕ ﺗﻮﺟﮧ ﺳﮯ ﺳﻨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﺑﻮﻝ ﺍﭨﮭﺎ : ﺧﺪﺍ ﮐﯽ ﻗﺴﻢ ! ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﮐﺎﮨﻦ ﺩﯾﮑﮭﮯ، ﺳﺎﺣﺮ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﺷﺎﻋﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺳﻨﺎ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﻼﻡ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﺳﻨﺎ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﮐﻠﻤﺎﺕ ﺗﻮ ﺍﯾﮏ ﺍﺗﮭﺎﮦ ﺳﻤﻨﺪﺭ ﺟﯿﺴﮯ ﮨﯿﮟ۔

ﺍﮮ ﻣﺤﻤﺪ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ، ﺍﻟﻠﮧ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﮨﺎﺗﮫ ﺑﮍﮬﺎﺋﯿﮯ ﺗﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﻼﻡ ﭘﺮ ﺁﭖ ﮐﯽ ﺑﯿﺖ ﮐﺮ ﻟﻮﮞ۔ ( ﺳﺒﺤﺎﻥ ﺍﻟﻠﮧ ) ﺳﺒﻖ : ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺣﻀﻮﺭ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﺑﺮﺣﻖ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺗﺎﺛﯿﺮ ﭘﺎﮎ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺑﮍﮮ ﺑﮍﮮ ﺳﻨﮓ ﺩﻝ ﻣﻮﻡ ﮨﻮ ﺟﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺟﻮ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺣﻀﻮﺭ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﻮ ﺳﺎﺣﺮ ﻭ ﻣﺠﻨﻮﻥ ﮐﮩﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﺩﺭﺍﺻﻞ ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﯾﮧ ﻣﺠﻨﻮﻥ ﺗﮭﮯ۔ ﺣﻮﺍﻟﮧ : ﺻﯿﺢ ﻣﺴﻠﻢ، ﺣﺪﯾﺚ: 868

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
85%
ٹھیک ہے
6%
کوئی رائے نہیں
6%
پسند ںہیں آئی
2%
اپنی رائے کا اظہار کریں -

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

انٹر نیٹ کی دنیا میں سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضا مین

loading...

تازہ ترین تصاویر


>