تازہ ترین :

شروع اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے ِ

الم ﴿۱﴾یہ کتاب (قرآن مجید) اس میں کچھ شک نہیں (کہ کلامِ خدا ہے۔ خدا سے) ڈرنے والوں کی رہنما ہے ﴿۲﴾ جو غیب پر ایمان لاتے اور آداب کے ساتھ نماز پڑھتے اور جو کچھ ہم نے ان کو عطا فرمایا ہے اس میں سے خرچ کرتے ہیں 

ad

گوگل سرچ انجن کے خاتمے کا آغاز؟

  25 جولائی 2017   |    12:30     |     ٹیکنالوجی

اگر انٹرنیٹ کی دنیا میں کوئی چیز تلاش کرنی ہو تو آپ کیا کریں گے؟ یقیناً سب سے پہلا نام گوگل کا ہی ذہن میں آئے گا۔مگر آپ کو یہ جان کر دھچکا لگے گا کہ اس کمپنی نے سرچ انجن کے خاتمے کی تیاری شروع کردی ہے۔جی ہاں واقعی ایسا ہونے والا ہے مگر ایسا کیسے اور کیوں ہوگا؟گوگل نے حال ہی میں اپنی کمپنی کی فلیگ شپ

ایپ میں نئے نیوز فیڈ کو متعارف کرایا تھا اور بہت جلد اس کا براؤزر ورژن بھی گوگل ڈاٹ کام پر سامنے آنے والا ہے۔ایک تو یہ گوگل کے سادہ ہوم پیج میں 1996 کے بعد آنے والی یہ سب سے بڑی تبدیلی ہے جبکہ اس کے ذریعے یہ سرچ انجن، فیس بک نیوز فیڈ کا مقابلہ کرنا چاہتا ہے جہاں ہر طرح کی معلومات اور خبریں دستیاب ہوتی ہیں۔مگر سب سے اہم امر یہ ہے کہ گوگل، آن لائن وقت گزارنے کے انداز کے حوالے سے خود کو بچانا چاہتا ہے۔اس وقت سوشل میڈیا میں آرٹیفیشل انٹیلی جنس کا استعمال عام ہوتا جارہا ہے جو کہ یہ پیشگوئی کرنے والی ٹیکنالوجی ہے کہ صارف اس وقت کیا دیکھنا چاہتا ہے اور گوگل اس معاملے میں پیچھے نہیں رہنا چاہتا۔ایپل، فیس بک اور دیگر نے حال ہی میں اپنی پراڈکٹس میں آرٹیفیشل انٹیلی جنس پر مبنی ٹیکنالوجی کو متعارف کرایا جو کہ صارفین کی درخواستوں کی پیشگوئی ان کے ٹائپ کرنے یا کہنے سے پہلے کرسکتی ہے۔اس کے مقابلے میں گوگل کی آمدنی کا سارا انحصار سرچ ٹریفک پر ہے اور اب بھی 99.9 فیصد آمدنی اسے سرچ سے ہی حاصل ہوتی ہے۔مگر گوگل کو خدشہ ہے کہ یہ نئی ٹیکنالوجی بتدریج اس کے سرچ انجن کو ختم کردے گی اور صارفین کی نظر میں یہ ماضی کی یادگار سے زیادہ کچھ نہیں ہوگا۔گوگل کے مطابق سرچ انجن ہمیشہ دستیاب رہے گا مگر اس کا انحصار وقت کے ساتھ کم ہوتا جائے گا، خاص طور پر آرٹیفیشل ٹیکنالوجی مضبوط ہونے پر۔اب اس نئی اَپ ڈیٹ کے ذریعے گوگل نے خود اس میدان میں قدم رکھا ہے اور اپنے سرچ انجن کی 'بتدریج موت' کا آغاز کردیا ہے۔

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
100%
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 
اپنی رائے کا اظہار کریں -

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

تازہ ترین تصاویر


>