تازہ ترین :

شروع اللہ کے نام سے جو بڑا مہربان نہایت رحم والا ہے ِ

الم ﴿۱﴾یہ کتاب (قرآن مجید) اس میں کچھ شک نہیں (کہ کلامِ خدا ہے۔ خدا سے) ڈرنے والوں کی رہنما ہے ﴿۲﴾ جو غیب پر ایمان لاتے اور آداب کے ساتھ نماز پڑھتے اور جو کچھ ہم نے ان کو عطا فرمایا ہے اس میں سے خرچ کرتے ہیں 

ad

اوباما نے سبکدوشی سے قبل بڑے اسلامی ملک کو خفیہ طور پر 130 ٹن یورنیم دینے کی منظوری دی

  12 جنوری‬‮ 2017   |    12:16     |     بین الاقوامی

واشنگٹن (ڈیلی آزاد نیوز ڈیسک )امریکی ذرائع ابلاغ نے انکشاف کیا ہے کہ صدر باراک اوباما نے سبکدوشی سے قبل ایران کو خفیہ طور پر 130 ٹن افزودہ کیے جانے کے قابل یورنیم خفیہ طور پر دینے کی منظوری دی ہے۔ ایران اس یورینیم کو جوہری تنصیبات کے لیے بہ طور ایندھن یا ایٹم بم کی تیاری کے لیے استعمال کرسکتا ہے۔امریکی اخبار نے اپنی رپورٹ میں سفارت کاروں کے حوالے سے بتایا ہیکہ افزودہ کیے جانے کے قابل قدرتی خام حالت

میں یورینیم کا ایک بھاری بھرکم ٹرک روس سے ایران کو فراہم کیا جائے گا۔ تاکہ ٹھنڈے ری ایکٹر کے لیے ایندھن درآمد کرنے میں تہران کی مدد کی جاسکے۔ صدر اوباما کی طرف سے ایران کو یہ تحفہ ان کی مدت صدارت ختم ہونے کے آخری ایام میں دیا جا رہا ہے۔امریکا کے دو سفارت کاروں نے اپنی شناخت ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ امریکی صدر باراک اوباما اور پانچ عالمی طاقتوں کی طرف سے منظوری کے بعد تہران کو 130 ٹن یورینیم قدرتی حالت میں دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ آئندہ چند روز میں تہران کو مذکورہ مقدار میں یورینیم خفیہ طور پر فراہم کیا جائے گا۔سفارت کاروں کا کہنا ہے کہ ایران کو یورینیم کی فراہمی سلامتی کونسل کی منظوری سے ہی ہونی چاہیے مگر جن پانچ عالمی طاقتوں کی طرف سے یہ منظوری دی گئی ہے وہ سلامتی کونسل کی مستقل رکن ہیں۔اس خفیہ ڈیل کے تحت روس ایران کو 40 میٹر ٹن[44ٹن] بھاری پانی فراہم کرچکا ہے۔ امریکا 30 ٹن یورینیم جلد ہی ایران کو بھجوائے گا جب کہ سلطنت اومان بھی تہران کو بھاری پانی فراہم کرے گا۔ اخبار کے مطابق امریکا کی طرف سے ایران کو فراہم کردہ یورینیم آئندہ 25 سال تک عالمی توانائی ایجنسی کی زیرنگرانی استعمال ہوگا۔ بین الاقوامی سیکیورٹی وسائنس انسٹیٹیوٹ سے وابستہ تجزیہ نگار ڈیوڈ البرائیٹ کا کہنا ہے کہ مذکورہ یورینیم سے ایران با آسانی 10 جوہری بم تیار کرسکتا ہے۔ادھر دوسری جانب ایران نے امریکی میڈیا میں آنے والی اطلاعات کی سختی سے تردید کی ہے۔ جوہری معاہدے پر طے پائے کی فالو اپ کمیٹی کے چیئرمین عباس عراقجی نے کہا ہے کہ ایران معاہدے کے تحت یورینیم کی ذخیرہ شدہ مقدار کو300 کلو گرام سے کم رکھنے کے فیصلے پر قائم ہے۔

اس خبر کے بارے میں اپنی رائے دیجئے
پسند آئی
 
ٹھیک ہے
 
کوئی رائے نہیں
 
پسند ںہیں آئی
 
اپنی رائے کا اظہار کریں -

انٹر نیٹ کی دنیا میں سب سے زیادہ پڑھے جانے والے مضا مین

loading...

اس وقت سب سے زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

بین الاقوامی خبریں

 
 

تازہ ترین تصاویر


>